پاکستانتازہ ترینکاروبار

حکومتی دعوے دھرے کے دھرے رہ گئے،، مہنگائی کا طوفان کھڑا ، حکومت کی جانب سے مختلف قسم کے ٹیکسز لگانے کے بعد اشیائے خوردونوش کی قیمتوں میں اضافہ

حکومتی دعوے دھرے کے دھرے رہ گئے،، مہنگائی کا طوفان کھڑا ، حکومت کی جانب سے مختلف قسم کے ٹیکسز لگانے کے بعد اشیائے خوردونوش کی قیمتوں میں اضافہ

ہم کہاں جائیں؟ حکومت کی جانب سے مختلف قسم کے ٹیکسز لگانے کے بعد اشیائے خوردونوش کی قیمتوں میں اضافے سے مہنگائی کا طوفان کھڑا ہوگیا۔ وفاقی حکومت کی جانب سے ٹیکسز کے نفاذ کے بعد اشیائے خوردونوش کی قیمتوں میں اضافہ ہوگیا، چینی 6700 روپے میں فروخت ہوئی، 250 روپے اضافے سے 6950 روپے ہوگئی، اسی طرح گھی کا ایک ڈبہ 300 روپے کا ہے۔ 380 روپے سے بڑھ کر 420 روپے، مونگ کی دال 280 روپے سے بڑھ کر 340 روپے، چنے کی دال 280 روپے سے بڑھ کر 320 روپے ہو گئی۔. آٹا، خشک دودھ، ڈبہ بند دودھ اور دیگر اشیاء کی قیمتوں میں اضافے سے شہری سخت پریشان ہیں۔ شہریوں کا کہنا ہے کہ حالیہ مہنگائی میں زندہ رہنا پہلے ہی مشکل ہے، ایسے میں حکومت کی جانب سے عائد ٹیکسوں نے عام آدمی کو متاثر کیا ہے۔ 2 روز کی روٹی کا حصول بھی مشکل ہو گیا، حکومت نے عام آدمی کو ریلیف دینے کے لیے اقدامات کر لیے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button